Aye Chand Muharram Ke Tu Badli Mein Chala Ja Lyrics – Noha

Aye Chand Muharram Ke Tu Badli Mein Chala Ja Lyrics – Noha. Aye Chand Muharram Kay Tu Badli Main Chala Ja Tujhai Dekh Kay Maarjaye Na Beemar Hain Sughra. Manqabat Shahidan e Karbala. Rad full noha lyrics of Aye Chand Muharram Ke from this post.

Aye Chand Muharram Ke Tu Badli Mein Chala Ja Lyrics

Ay Chand Muharram Kay Tu Badli Main Chala Ja
Tujhai Dekh Kay Maarjaye Na Beemar Hain Sughra

Ghar Zahra Ka Lutnay Ki Khabar Tunay Sunayi
Tujhai Dekh Kay Roti Hai Muharram Main Khudayi
Chauda So Baras Beetay Sab Kartay Hain Shikwah

Milnay Kay Liye Bhai Ko Baychain Bari Hain
Kabse Ali Akbar Ki Yeh Rahoon Main Khari Hain
Bichri Hai Yeh Muddat Seh Issay Tu Nah Nazar Ah

Veeran Gharon Maina Issay Neendh Hain Aati
Akbar Ki Judai Hain Issay Khoon Rulati
Qadmon Kay Nishaan Dhaamph Kay Behti Hai Sarerah

Gin Kay Jo Sughra Nei Yeh Din Hain Guzarai
Zinda Hai To Akbar Kay Wadon Kay Saharay
Din Raat Tarapti Hain Issay Aur Nah Tarpa

Bhai Ki Judai Main Paraishaan Hay Rehti
Har Roz Yeh Nana Ko Roro Kay Hain Kehti
Akbar Nah Milla Nana Main Marjaungi Tanha

Behno Se Tho Bhaiyo Seh Rishta Hi Ajab Hai
Tum Bhool Gaye Mujh Ko Yeh Kaisa Gazab Hai
Iss Aas Peh Zinda Hun Dekhun Tere Chehra

Sughra Ke Naseebo Meh Tho Rona Hi Likha Hai
Sardaar Masooma Ko Mili Kaisi Saza Heh
Khat Aya Na Akbar Ka Roti Rahi Sughra

اے چاند محرّم کے اردو لیرکس

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

تجھے دیکھ کے مر جائے نہ بیمار ہے صغرا

 

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

گھر زہرہ کا لٹنے کی، خبر تو نے سنائی

تجھے دیکھ کے روتی ہے، محرّم میں خدائی

چودہ سو برس بیتے سب کرتے ہیں شکوہ

 

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

ملنے کے لئے بھائی، کو بیچین کھڑی ہے

کب سے علی اکبر کی، یہ راہوں میں کھڑی ہے

بچھڑی ہے یہ مدّت سے اسے تو نہ نظر آ

 

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

ویران گھروں میں نہ، اسے نیند ہے آتی

اکبر کی جدائی ہے، اسے خون رلاتی

قدموں کے نشانات پہ بیٹھی ہے سر راہ

 

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

گن گن کے جو صغرا نے، یہ دن ہیں گزارے

زندہ ہے تو اکبر کے، وعدوں کے سہارے

دن رات تڑپتی ہے اسے اور نہ تڑپا

 

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

بھیا کی جدائی میں، پریشان ہے رہتی

ہر روز یہ نانا کو، رو رو کے ہے کہتی

 

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

رونے نہیں دیتے مجھے، راتوں کو مسلمان

بیماری سے بےحال ہوں، کچھ روز کی مہمان

ہر سمت سے ہے مجھ کواب موت نے گھیرا

 

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

تجھے دیکھ کے مر جائے نہ بیمار ہے صغرا

اے چاند محرّم کے، تو بدلی میں چلا جا

Read Also: Bara Lajpal Ali Lyrics

Leave a Comment